fbpx

Type to search

فریال تالپور کو سندھ ہائی کورٹ کی طرف سے نوٹس

فریال تالپور کو سندھ ہائی کورٹ کی طرف سے نوٹس

Share

سندھ ہائی کورٹ نے پیر کے روز پیپلز پارٹی کی رکن صوبائی اسمبلی اور آصف علی زرداری کی ہمشیرہ فریال تالپور کو 90 بلین روپے کی بدعنوانیت کے کیس میں نوٹس بھیجا۔ ان پر الزام ہے کہ انہوں نے لاڑکانہ کی ترقیاتی رقم سے پیسے استعمال کیے ہیں۔

فریال تالپور، پی پی پی کی رکن صوبائی اسمبلی

جسٹس محمد مظہر علی نے سماعت کی درخواست منظور کرتے ہوئے محترمہ تالپور کو عدالت آنے کا نوٹس دیا اور 16 نومبر کی تاریخ مقرر کی۔

مدعی بشیر عباس نے عدالت کو درخواست جمع کروائی کہ فریال تالپور نے عدالت کی دی گئی مہلت میں جواب دائر نہیں کروایا اس لیے عدالت کو انہیں طلب کرنا چاہیے۔ عدالت نے درخواست منظور کرتے ہوئے کہا کہ ضرورت پڑنے پر عدالت کسی کو بھی طلب کرلے گی مگر فیصلہ انصاف کے اصولوں پر ہو گا۔

فریال تالپور اور ان کے بھائی آصف علی زرداری پر عوامی دولت میں بدعنوانیت اور منی لانڈرنگ کے مقدمات کے ساتھ ساتھ آمدن سے زیادہ اثاثوں کا کیس بھی جاری ہے۔ زرداری اور حزب اختلاف کی جماعتوں کا کہنا ہے کہ احتساب کے نام پر سیاسی انتقام لیا جا رہا ہے۔ نیب کی طرف سے تنگ ہوتے دائرے کی وجہ سے حزب اختلاف کا اتحاد ایک حقیقت بنتا نظر آ رہا ہے۔

حزب اختلاف کا سیاسی گٹھ جوڑ

Tags::
Balach Khan

Balach Khan is the Urdu editor at ProperGaanda and writes articles about Politics, Entertainment and Social Issues. Twitter: @alreadytakenwas

  • 1

You Might also Like